Khuli Aankhon Mein Sapna Jhankta Hai

0
66
parveen shakir poetry

 

 

KHULI AANKHON MEIN SAPNA JHAANKTA HAI,
WOH SOYA HAI KE KUCH KUCH JAAGTA HAI,
TERE CHAHAT KE BHEEGEY JUNGLON MEIN,
MERA TAN MAN MOR BAN KAR NACHTA HAI,
MUJHE HAR KEFIYAT MEIN KYON NA SAMJHEY,
WOH MERE SAB HAWAALEY JAANTA HAI,
MAIN USS KI DASTRASS MAIN HOON MAGAR WOH,
MUJHE MERI RAZAA SE MANGTA HAI,
KISSI KE DHEYAAN MAIN DOOBA HUA DIL,
BAHAANEY SE MUJHE BHI TAALTA HAI,
SARRAK KO CHORR KAR CHALNA PAREGA,
KE MERE GHAR KA KACCHAA RASTA HAI..

کُھلی آنکھوں میں سپنا جھانکتا ہے
وہ سویا ہے کہ کُچھ کُچھ جاگتا ہے
تری چاہت کے بھیگے جنگلوں میں
مرا تن، مور بن کے ناچتا ہے
مُجھے ہر کیفیت میں کیوں نہ سمجھے
وہ میرے سب حوالے جانتا ہے
میں اُس کی دسترس میں ہوں، مگر وہ
مُجھے میری رضا سے مانگتا ہے
کسی کے دھیان میں ڈوبا ہوا دل
بہانے سے مجھے بھی ٹالتا ہے
سڑک کو چھوڑ کر چلنا پڑے گا
کہ میرے گھر کا کچّا راستہ ہے

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)