Zuhd Aur Rindi Allama Iqbal

0
230
Allama Iqbal Poems

 

[adsense_inserter id=”5423″]

 

Aik Molvi Sahib Kee Sunaata Hoon Kahani
Teyzi Naheen Manzoor Tabiat Kee Dekhani

Shohra Tha Buhat Apki Sufi Manshee Ka
Kertey Thay Adub Unka Aa’aali-o-Adani
Kahtey They Kay Pinhan Hey Tasawwuf Main Shariat
Jis Terah Kay Alfaaz Main Muzmar Hon Ma,ani
Labreyz Mai-e-Zuhd Say Thee Dil Kee Surahi
Thee Teh Main Kaheen Derd-e-Khiyaal-e-Hama-Dani
Kerte Thay Bayan Aap Karamat Ka Apnee
Manzur Thee Tadad Mureedun Kee Barhani

Muddat Say Raha Kertey They Humsaay Main Maire
Thee Rind Say Zahid Kee Mulaqat Puraani

Hazrat Nay Maire Ek Shanasa Say Yeh Poocha
Iqbal Key Hey Qumri-e-Shamshad-e-Mani

Pabandi-e-Ahkum-e-Shariat Main Hey Keysa..
Go Shaiir Main Hey Rushak-e-Kalim-e-Hamdaani

Sunta Hoon Kay Kafir Naheen Hindu Ko Samajhta
Hey Aeysa Aqida Asar-e-Falsafa Dani

Hey Isski Tabiyat Main Tashayyu Bhee Zara Sa
Tafzeel-e-Ali (R.A.) Hum Nay Suni Iss Kee Zubani

Samjha Hey Key Hey Raag ebadaat Main Dakhil
Maqsud Hey Mazhub Kee Mager Khaak Urani

Kuchh Aar Issey Husan Faroshon Say Naheen Hey
Aadat Ye Hamary Shuara Kee Hey Purani

gana Jo Hey Shub Ko To Saher Ko Hey Tilavat
Iss Ramz Kay Ub Tak Na Khulay Ham Pay Mani

Lekin Ye Suna Apny Muridoun Say Hey Mene
Be-Daagh Hey Manind-e-Sehar Iski Javani

Majmooa-e-Azdad Hey, Iqbal Naheen Hey
Dil Dafter-e-Hikmat Hey, Tabiat Khuftani

Rindi Say Bhee Aagah, Shariat Say Bhee Waqif
Pucho Jo Tasawwuf Kee To Mansoor Ka Sani

Iss Shakhs Kee Ham Per To Haqeeqat Naheen Khulti
Ho Ga Ye Kisi Or Hee Islam Ka Baani

Al-Qissa Buhat Toul Deya Vaaz Ko Apney
Ta Deyr Rahee App Kee Ye Nagaz Bayani

Iss Shehar Main Jo Bat Ho, Urh Jaati Hey Sab Main
Men Nay Suni Apnay Ahibba Kee Zubaani
Ek Din Jo Sar-e-Rah Miley Hazrat-e-Zahir
Pher Chhir Gayi Baton Main vahi Baat Purani

Fermaya, Shekayat Voh Muhabbat Key Sabab Thee
Tha Farz Maira Rah Shariat Kee Dekhani

Men Ne Ye Kaha Koi Gila Mujh Ko Naheen Hey
Ye Apka Haq Tha Zarah-e-Kurb-e-Makani

Kham Hey Sar-e-Taslim Maira Apke Agey
Peeri Hey Tawaza Kay Sabub Mairi Jawaani

Gar Apko Maloom Naheen Mairi Haqeqat
Peyda Naheen Kuch Iss Se Qasoor-e-Hamdani

Men Khud Bhee Nahen Apni Haqeqat Ka Shanasa
Gehra Hey Maire Bahr-e-Khiyalat Ka Pani

Mujh Ko Bhee Tammanna Hey Ke ‘Iqbal’ Ko Deykhun
Ki Iss Ki Juddai Main Buhat Ashak Fishaani
Iqbal Bhee ‘Iqbal’ Say Agah Naheen Hey
Kuch is Main Tamaskhar Naheen Wallah Naheen Hey

اک مولوی صاحب کی سناتا ہوں کہانی
تیزی نہیں منظور طبیعت کی دکھانی
شہرہ تھا بہت آپ کی صوفی منشی کا
کرتے تھے ادب ان کا اعالی و ادانی
کہتے تھے کہ پنہاں ہے تصوف میں شریعت
جس طرح کہ الفاظ میں مضمر ہوں معانی
لبریز مۓ زہد سے تھی دل کی صراحی
تھی تہ میں درد خیال ہمہ دانی
کرتے تھے بیاں آپ کرامات کا اپنی
منظور تھی تعداد مریدوں کی بڑھانی
مدت سے رہا کرتے تھے ہمساۓ میں میرے
تھی رند سے زاہد کی ملاقات پرانی
حضرت نے مرے اک شناسا سے یہ پوچھا
اقبال کہ ہے قمری شمشاد معانی
پابندئ احکام شریعت میں ہے کیسا؟
گو شعر میں ہے رشک کلیم ہمدانی
سنتا ہوں کہ کافرنہیں ہندو کو سمجھتا
ہے ایسا عقیدہ اثر فلسفہ دانی
ہے اس کی طبیعت میں تشیع بھی ذرا سا
تفضیل علی ہم نے سنی اس کی زبانی
سمجھا ہے کہ ہے راگ عبادت میں داخل
مقصود ہے مذہب کی مگر خاک اڑانی
کچھ عار اسے حسن فروشوں سے نہیں ہے
عادت یہ ہمارے شعراء کی ہے پرانی
گانا جو ہے شب کو تو سحر کو ہے تلاوت
اس رمز کےاب تک نہ کھلے ہم پہ معانی
لیکن یہ سنا اپنے مریدوں سے ہے میں نے
بے داغ ہے مانند سحر اس کی جوانی
مجموعہ اضداد ہے ، اقبال نہیں ہے
دل دفتر حکمت ہے،طبیعت خفقانی
رندی سے بھی آگاہ، شریعت سے بھی واقف
پوچھو جو تصوف کی تو منصور کا ثانی
اس شخص کی ہم پر تو حقیقت نہیں کھلتی
ہو گا یہ کسی اور ہی اسلام کا بانی
القصہ بہت طول دیا وعظ کو اپنے
تا دیر رہی آپ کی یہ نغز بیانی
اس شہر میں جو بات ہو، اڑ جاتی ہے سب میں
میں نے بھی سنی اپنے احبا کی زبانی
اک دن جو سر راہ ملے حضرت زاہد
پھر چھڑ گئ باتوں میں وہی بات پرانی
فرمایا، شکایت وہ محبت کے سبب تھی
تھا فرض مرا راہ شریعت کی دکھانی
میں نے یہ کہا کوئ گلہ مجھ کو نہیں ہے
یہ آپ کا حق تھا زرہ قرب مکانی
خم ہے سر تسلیم مرا آپ کے آگے
پیری ہے تواضع کے سبب میری جوانی
گر آپ کو معلوم نہیں میری حقیقت
پیدا نہیں کچھ اس سے قصور ہمہ دانی
میں خود بھی نہیں اپنی حقیقت کا شناسا
گہرا ہے مرے بحر خیالات کا پانی
مجھ کو بھی تمنا ہے کہ اقبال کو دیکھوں
کی اس کی جدائ میں بہت اشک فشانی
اقبال بھی اقبال سے آگاہ نہیں ہے
کچھ اس میں تمسخر نہیں واللہ نہیں ہے

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)