Agarche Tujh Se Boht Ikhtilaf Bhi Na Hua

0
68
parveen shakir poetry

Agarche Tujh Se Boht Ikhtilaf Bhi Na Hua Parveen Shakir

 

 

AGARCHE TUJHSE BOHAT IKHTILAAF BHI NA HUA,
MAGAR YEH DIL TERI JANIB SE SAAF BHI NA HUA,
TALUQAAT KE BARZAKH MAIN HI RAKHA MUJH KO,
WOH MERE HAQ MAIN NA THA AUR KHILAAF BHI NA HUA,
AJAB THA JURM-E-MOHABBAT KE JIS PE DIL NE MERE,
SAZAA BHI PAAYI NAHIN AUR MAAF BHI NA HUA,
MALAAMTON MAIN KAHAN SAANS LE SAKEN GE WOH LOG,
KE JIN SE KUYE-JAFAA KA TAWAAF BHI NA HUA,
AJAB NAHIN HAI KE DIL PAR JAMMI MILI KAAYI,
BOHAT DINON TO YEH HOZZ SAAF BHI NA HUA,
HAWAA-E-DAKHAR HUMEN KIS LIYE BUJHATI HAI,
HUMEN TO TUJHSE KABHI IKHTILAAF BHI NA HUA..

 

Agarche Tujh Se Boht Ikhtilaf Bhi Na Hua by Parveen Shakir in Urdu

اگرچہ تجھ سے بہت اختلاف بھی نہ ہوا
مگر یہ دل تری جانب سے صاف بھی نہ ہوا
تعلقات کے برزخ میں ہی رکھا مجھ کو
وہ میرے حق میں نہ تھا اور خلاف بھی نہ ہوا
عجب تھا جرم محبت کہ جس پہ دل نے میرے
سزا بھی پائ نہیں اور معاف بھی نہ ہوا
ملامتوں میں کہاں سانس لے سکیں گے وہ لوگ
کہ جن سے کوۓ جفا کا طواف بھی نہ ہوا
عجب نہیں ہے کہ دل پر جمی ملی کائ
بہت دنوں سے تو یہ حوض صاف بھی نہ ہوا
ہواۓ دہر ہمیں کس لیۓ بجھاتی ہے
ہمیں تو تجھ سے کبھی اختلاف بھی نہ ہوا

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)